براؤزنگ بلاگز

بلاگز

استاد کبھی نہیں مرتے

زاہر نور یوسفی یہ کراچی یونیورسٹی میں ہمارے ماسٹرز فائنل ائیر کے آخری سمسٹر کی بات ہے۔ پوری کلاس میں سکوت طاری تھا۔ ایسے میں پروفیسر صاحب نے پوچھا، "مونا لیزا کی شہرہ آفاق پینٹنگ کس نے بنائی تھی؟" پوری کلاس گونج اٹھی، "لیونارڈو

حسبِ توقع برطانیہ نے بھی اپنی کرکٹ ٹیم کو دورہ پاکستان سے روک دیا!

ملک جہانگیر اقبال جیو پالیٹکس کے طالب علموں کیلئے یہ کوئی انوکھی خبر نہیں، لیکن ایک موہوم سی امید تھی کہ شاید مغرب کی آنکھ میں شرم کا کوئی بال ہوگا، پھر یاد آیا کہ میرے استاد کہا کرتے تھے کہ بین الاقوامی سیاست کا کوئی مذہب،

گاندھی کا مرن برت اور اس کی حقیقت

محمد عارف گل قتل کسی انسان کا بھی ہو ایک ظلم عظیم ہے اور ایک سیاسی و مذہبی لیڈر کا قتل اور بھی قابل مذمت، مگر حیرت کی بات یہ ہے کہ گاندھی کی موت کے دن ہمیں باور کرایا جاتا ہے کہ گاندھی نے پاکستان کے لیے جان دی۔ ہاں اس نے

قصہ بس کے سفر کا

ملک جہانگیر اقبال اسلام آباد سے کراچی واپسی کے سفر میں ہوں۔ آتے ہوئے بھی اسی لگژری بس سے سفر کیا تھا تو سوچا واپسی بھی اسی بس میں کی جائے۔ اچھا ٹھیک ہے بھئی، مان لیا کہ واپسی پر جہاز کے ٹکٹ پچیس ہزار کے ہوئے پڑے تھے، لہٰذا

پاکستان کرکٹ پر خودکُش حملہ

محمد راحیل وارثی گزشتہ دنوں نیوزی لینڈ کی کرکٹ ٹیم 18 برس بعد پاکستان پہنچی تو شائقین کرکٹ میں ان مقابلوں کے حوالے سے خاصا جوش و خروش پایا جاتا تھا۔ نیوزی لینڈ کی ٹیم پریکٹس کے لیے راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم بھی آتی جاتی رہی۔ 17

خود کشی (قسط نمبر 2)

ابرام گرگ اب رسی پنکھے سے لٹک رہی تھی، مجھے کوئی جلدی نہیں تھی، پھر بھی خود کشی میرے لئے ایک بالکل مختلف نوعیت کا تجربہ تھا، کیونکہ میں جانتا تھا یہ دنیا میں میری سیکھنے کی آخری چیز ہے، اسے مجھے ہر پہلو سے خوب غور سے دیکھنا

ایک دن بہادرشاہ ظفر کے ساتھ۔

ثنا اللہ خان احسن مغل بادشاہ کے آنکھوں دیکھے شب و روز بادشاہ کیسی زندگی گزارتے تھے! مغلوں کے کھانے اور ان کے نام اورنگ زیب عالمگیر کے بعد سے مغلوں کے اقتدار کو گُھن تو لگنا شروع ہو گیا لیکن وضع داریاں باقی تھیں، اچھی بری رسمیں

لندن سے ایک خط

فیضان عارف نرسرییہ لندن کا ایک مضافاتی علاقہ ہے، گریٹر لندن کے مشرق اور کینٹ کے سنگم پر واقع یہ سرے کاؤنٹی اپنے خوبصورت لینڈ سکیپ اور درختوں کی بہتات کی وجہ سے اُن لوگوں کے لیے خاص کشش رکھتی ہے جو فطرت اور فطری حسن سے محبت کرتے

قصہ ایک کاروباری مقدمے کا

‎تحریر: عابد علی بیگلکّڑ ہضم پتھر ہضم ۔ ایکسو‎سن 1960 کی دہائی کے آخیر اور ستر کی دہائی کے آغاز میں اخبارات، رسائل، ریڈیو اور ٹی وی پر ایک اشتہار بہت نمایاں تھا ‎"ایکسو کی ایک ہی ٹکیہ کرے ‎لکڑ ہضم پتھر ہضم‎ ایکسو۔" ایکسو ‎ہاضمے کی یہ گولیاں

خود کشی (حصہ اول)

ابرام گرگ اداسی کی ایک ایسی گھڑی جب مجھے پھانسی کے پھندے میں بیک وقت خوف اور چھٹکارا نظر آتا تھا۔ یہ رات کا آخری پہر تھا، دنیا خواب میں ڈوبی ہوئی تھی، کچھ لوگ اپنے سپنوں میں حسین دوشیزاؤں کے ملائم جسموں کو اس طرح ٹٹول رہے تھے جیسے موچی چمڑے