سندھ کا نظام تعلیم اور نئے وزیر تعلیم

عاجز جمالی سندھ کی تعلیم ، تعلیمی ادارے، تعلیمی بحران، خستہ حال عمارتیں، اور ڈیڑھ برس سے تعلیمی اداروں کو لگے تالے ہر دوسرے شخص کے لبوں پر موضوع بحث ہے۔ برصغیر کی تقسیم سے قبل سندھ کا خطہ درس گاہوں کا مرکز ہوا کرتا تھا۔ ٹھٹھہ سے

شاہ لطیف کی شاعری میں واقعہ کربلا کی منظر نگاری

عاجز جمالی شاہ عبداللطیف بھٹائی کو عالمی ادارے یونیسکو نے حال ہی میں عالمی ادب میں شامل کرنے کی شفارش کی ہے اور شاہ لطیف کو عالم انسانیت کا شاعر تسلیم کیاہے۔ ویسے شاہ لطیف کی شاعری کو کسی عالمی ادارے کی سند کی ضرورت تو

صحافی کا وکیل بیٹا ناظمِ کراچی

عاجز جمالی ماضی میں شیخ زید بن سلطان ٹرسٹ کے زیر انتظام جاری ہونے والے اخبارات میں روزنامہ مساوات اردو اور روزنامہ ہلال پاکستان سندھی وہ اخبارات تھے جو ذوالفقار علی بھٹو حکومت کے ترجمان تصور کیے جاتے تھے لیکن حقیقت میں وہ مکمل عوامی

پولیس کا ہے فرض مدد آپ کی

عاجز جمالی مجھے اب سال تو یاد نہیں لیکن یہ کوئ سنہ 1980 کی دہائی کے وسط کی بات ہے کہ عید کے دوسرے دن ہم دس بارہ لڑکوں نے کراچی گھومنے کا پروگرام بنایا۔ جوہی سے دادو، پھر دادو سے حیدر آباد اور آخر میں آوارہ گردیاں کرتے ہم

سندھ میں تبدیلی مگر کس نسل کی ؟

عاجز جمالی جنرل پرویز مشرف کی حکومت کو ابھی دو برس ہی مکمل ہوئے تھے کہ ان کی اپنی نگرانی میں سنہ 2002 کو عام انتخابات ہوئے وفاقی اور صوبائی حکومتیں تشکیل دینے کے لئے جنرل صاحب اور اس کے حامیوں کو مشکل صورتحال کا سامنا تھا۔ سندھ میں پیپلز

صلاح الدین حیدر کے کڑاکے دار سوالات اور بے نظیر بھٹو

وہ نہ کوئی میرے گہرے دوست تھے نہ ہی ہم عصر۔ جب ہم نے رپورٹنگ شروع کی وہ ملک کے مایہ ناز صحافی تھے۔ بہت بڑے سیاسی رپورٹر۔ ان کے ہم عصر یا ان کے پائے کے اُس زمانے کے جو رپورٹرز تھے ان میں ادریس بختیار، صبیح الدین غوثی، یوسف خان، مظہر عباس،

بے نظیر بھٹو کی حکومت گرانے میں کون ملوث تھا؟

عاجز جمالی پاک فوج کے سابق سربراہ جنرل مرزا اسلم بیگ نے اپنی سوانح حیات میں لکھا ہے کہ 17 اگست 1988 کو آرمی چیف جنرل ضیا کے جہاز کے حادثے کے بعد انہوں نے تین گھنٹے کے اندر آئین کو بحال کردیا تھا۔ مرزا اسلم بیگ لکھتے ہیں کہ

نہ بھٹو کو پھانسی ہوتی نہ جنرل ضیاء کا حادثہ ہوتا

بھٹو کو پھانسی ہوتی نہ جنرل ضیا کا حادثہ ہوتا نہ جنرل مشرف کی حکومت ہوتی نہ بے نظیر قتل ہوتی عاجز جمالی پاکستانی فوج کے سابق سربراہ جنرل اسلم بیگ ان فوجی سربراہان میں شامل ہیں جن کو بے نظیر بھٹو کی جمہوری حکومت نے “تمغہ جمہوریت “ سے…

ممتاز بھٹو: آکسفورڈ، فیوڈل ازم اور پاکستانی سیاست

عاجز جمالی 70 کی دہائی پاکستان کی سیاست، ادب، ٹی وی ڈرامہ، انقلابی تحریکوں، پارلیمنٹ اور عالمی پس منظر میں انتہائی اہم دہائی رہی۔ گذشتہ نصف صدی تک مجموعی طور پر ہمارا سماج ستر کی دہائی کے گرد ہی گھومتا رہا، شاید آج تک گھوم رہا ہے۔ 70 کی

گاج ندی: تباہی اور خوش حالی ساتھ ساتھ

عاجز جمالی گاج ندی سندھ کے ضلع دادو اور جامشورو کی حدود میں واقع ہے۔ کھیرتھر کا پہاڑی سلسلہ سندھ اور بلوچستان کو ملاتا ہے، اس لیے گاج کی ابتدا تو بلوچستان کے ضلع خضدار کے پہاڑوں سے ہوتی ہے، لیکن وہاں سے شروع ہوکر ضلع لسبیلہ سے ہوتا